admin@chamkani.net | 0335-9687717

احمد شاہ ابدالی کے وفات کے بعد اس کا بیٹا تیمور شاہ بادشاہ بنا پشاور کے کئی قبائلی سردار تیمور شاہ کے طور طریقوں کو پسند نہیں کرتے تھے اور ان کی عیاشیوں کو بھی اس لئے وہ تیمور شاہ کو ہٹا کر اس کی جگہ اس کے بھائی سکندر مرزا کو بادشاہ بناناچاہتے تھے۔تہکال کے ارباب فیض اللہ خان اور مہمند کے سردار ارسلا خان اس مہم میں پیش پیش تھے۔اس مہم میں ان کے ساتھ چمکنی کے بزرگ حضرت میاں عمر ؒ کے صاحبزادے کی حمایت بھی حاصل ہوگئی اور اس نے مذہبی اعتبار سے تیمور شاہ کی مخالفت شروع کر دی۔تیمور شاہ نے ان سے بدلہ لینا چاہا لیکن چونکہ تیمور شاہ کے والد احمد شا ہ بابا میاں عمرؒ چمکنی کے دلی ادارت مند تھے اور علاقہ پشاور کے مسلمانوں کی کثیر تعداد بھی میاں ؒ صاحب چمکنی کے ہم نوا تھی۔
اس لئے عمائدین حکومت نے تیمور شاہ کو درگزر سے کام لینے کا مشورہ دیا جو اس نے قبول کیا۔
اس دوران صاحبزادہ صاحب نے پشاور سے ہجر ت کرکے ملاکنڈ ایجنسی میں یوسفزئی قبیلے کے ہاں پناہ لی چنانچہ جس جگہ صاحبزادہ صاحب نے امان لی تھی اسے (امان درہ ) کہا جانے لگا۔کافی عرصہ کے بعد یہ لوگ وطن واپش آگئے ۔